وطن چھوڑ کر جانے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، سابق چیئرمین واپڈا کا مقدمے کے دفاع کا اعلان

دینہ:‌جہلم سے تعلق رکھنے والے سابق چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل (ر) مزمل نے ملک میں رہ کر اپنے خلاف درج مقدمے کے بھرپور دفاع کا اعلان کردیا ہے۔

نجی چینل ٹی وی چینل سے گفتگو میں لیفٹیننٹ جنرل (ر) مزمل حسین نے کہا کہ انٹرنیشنل کمیشن آن لارج ڈیمز نے اجلاس میں مدعو کیا ہے، آئی کولڈ میں شرکت کو وطن سے فرار کہنا گمراہ کن کوشش ہے، وطن چھوڑ کر جانے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

ان کا کہنا تھا کہ ملک میں موجود ہوں اور ہر الزام کا قانونی انداز میں جواب دوں گا۔ وطن عزیز کو بڑے آبی ذخائر درکار ہیں، معیشت شفاف اور سستی توانائی سے جڑی ہے، زرعی شعبے کی افزائش، قومی ضرورت کیلئے پانی کے ذخائر ناگزیر ہیں جبکہ ہمسایہ ملک میں آبی ذخائر کیلئے تعمیرات آبی جارحیت کا اشارہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے 60 کی دہائی کے بعد سے آبی ذخائر کی تعمیرپر خاطر خواہ پیشرفت نہیں ہوئی، عمران خان حکومت نے آبی ذخائر کی دہائی کا منصوبہ متعارف کرایا، منصوبے کے تحت دس آبی ذخائر کی تعمیر کیلئے غیر معمولی تیزی آئی اور حکومت پاکستان کے آبی ذخائر کی دہائی منصوبے کو عالمی سطح پر پذیرائی ملی۔

سابق چیئرمین واپڈا نے مزید کہا تربیلا فور کی کامیابی پر ورلڈ بینک ہمیں تربیلا فائیو کیلئے تعاون کرنے جارہاہے یہ دنیا کی تاریخ کا واحد پراجیکٹ ہے جو وقت پر اور کم لاگت سے مکمل ہوا، تاریخی منصوبے پر ایسا پروپیگنڈا نہ کریں جس سے ملک کی ترقی متاثر ہو۔

لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ مزمل حسین نے یہ بھی کہا کہ بدقسمتی سیاپنی ترقی کی راہ میں ہم خود سب سے بڑی رکاوٹ ہیں، یہاں جھوٹ اور سچ میں فرق ختم ہوگیا ہے۔

یاد رہے کہ نیب کی جانب سے ان پر مقدمہ دائر کیا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ انہوں نے تربیلا فور پراجیکٹ میں 753 ملین ڈالرز کی مبینہ کرپشن کی اور بطور چیئرمین واپڈا زبردستی کنٹریکٹرز کو غلط ادائیگیاں کرائیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button