پسند کی شادی کا بھوت اور خانگی جھگڑے، لڑکیوں کا گھروں سے فرار ہونے میں خوفناک حد تک اضافہ

جہلم: پسند کی شادی کا بھوت، خواتین، لڑکیوں کا گھروں اور طالبات کا سکولز و کالجز سے فرار ہونے میں خوفناک حد تک اضافہ، معاشی مجبوریوں، مسائل، خانگی جھگڑوں، پسند کی شادی کا سروں پر بھوت سوار ہونے کے باعث گھروں سے شادی شدہ خواتین، غیرشادی شدہ لڑکیوں اور طالبات کے فرار ہونے کے واقعات میں خوفناک حد تک اضافہ ہو گیا ہے۔

رواںسال کے پہلے 5 ماہ یکم جنوری تا 30 مئی تک ضلع جہلم سے مجموعی طور پر درجنوں لڑکیاں گھروں سے بھاگ کر دارالامان یا ادھر ادھر غائب ہو چکی ہیں یا انہوں نے کچہریوں میں پہنچ کر پسند کی شادیاں کر لیں، ان میں متعدد شادی شدہ خواتین بھی شامل ہیں۔ ضلع کچہری میں خواتین کی طرف سے طلاق حاصل کرنے کے مقدمات میں بھی غیر معمولی اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

رواں سال اب تک مجموعی طور پر 3 درجن سے زائد خواتین نے فیملی کورٹس میں طلاق، حق مہر، خرچہ، بچوں کی حوالگی، خلہ کے مقدمات دائر کر رکھے ہیں جبکہ اس عرصہ میں متعدد خواتین نے خلہ کا دعویٰ دائر کر کے بذریعہ عدالت طلاقیں بھی حاصل کی ہیں۔

قانونی ماہرین نے بتایا کہ پہلے خواتین گھریلو تشدد پر خاموش رہتی تھیں، اب قوانین سے آگاہی کیوجہ سے وہ انصاف کیلئے عدالتوں سے رجوع کر لیتی ہیں یہ سب معاشی و سماجی مسائل اور ایک خاندان کی تقسیم در تقسیم، پسند کی شادیوں کی وجوہات ہیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button