ٹریفک پولیس جہلم کی ڈیل یا ڈھیل، جہلم شہر کی سڑکیں تباہ وبرباد ہونے لگیں

جہلم: ٹریفک پولیس کی ڈیل یا ڈھیل ، شہر کی سڑکیں تباہ وبرباد ہونے لگیں، اندرون شہر بھاری گاڑیوں کے داخلے پر پابندی عائد نہ ہوسکی، حادثات روزانہ کا معمول بن گئے، درجنوں شہری زندگی کی بازیاں ہار گئے، بیشتر معذوری کی زندگیاں گزارنے پر مجبور، ٹریفک پولیس کے افسران و اہلکار شاندار چوک تک محدود، ڈی پی او سے شہر کے داخلی وخارجی راستوں پر بیریئر لگانے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق قائم مقام ڈی ایس پی ٹریفک کی عدم دلچسپی کے باعث اندرون شہر کی سڑکوں پر بھاری گاڑیوں کے داخلے پر پابندی عائد نہ ہو سکی جس کی وجہ سے اندرون شہر کی سڑکیں گڑھوں میں تبدیل ہو چکی ہیں، دن اور رات کے اوقات میں تیز رفتار ڈمپر، ٹرک، ٹریکٹر ٹرالیوں اور دیگر بھاری گاڑیوں کی آمدورفت جاری رہتی ہے جس کیوجہ سے جادہ چوک تا ضلع کچہری روڈ گڑھوں میں تبدیل ہو چکی ہے جبکہ ضلع کچہری تا چک دولت نئی تعمیر ہونے والی سڑکیں بھی بھاری گاڑیوں کی وجہ سے زمین دھنس چکی ہیں۔

یہاں پر قابل ذکر بات یہ ہے کہ حکومت نے شہر کے داخلی و خارجی راستوں پر بورڈ آویزاں کر رکھے ہیں جس پر ہدایات درج ہیں کہ اندرون شہر دن اور رات کے اوقات میں بھاری گاڑیوں کے داخلے پر سخت پابندی عائد ہے لیکن ٹریفک پولیس، سیکرٹری ڈسٹرکٹ روڈ ٹرانسپورٹ اتھارٹی ، تھانہ صدر ، موٹر وہیکل ایگزیمینر کی عدم دلچسپی کیوجہ سے شہر کی سڑکوں پر بھاری گاڑیاں دوڑتی نظرآتی ہیں جس کی وجہ سے سڑکیں موہنجوداڑو کی منظر کشی کر رہی ہیں۔

ٹرک، ڈمپرز اور ٹرالر ڈرائیورز موٹرسائیکل سواروں اور چھوٹی گاڑیوں کو گزرنے کے لئے راستہ بھی نہیں دیتے جس کیوجہ سے بھاری گاڑیوں میں لوڈ، خاکہ، بجری، ریت کے زرات موٹرسائیکل سواروں سمیت پیدل چلنے والوں کی آنکھوں میں پڑتے ہیں جس کی وجہ سے حادثات سمیت شہری آشوب چشم کی بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں۔

شہریوں نے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر سے مطالبہ کیا ہے کہ قائم مقام ڈی ایس پی ٹریفک کو شہر کے اندر بھاری گاڑیوں کے داخلے پر پابندی عائد کرنے کا پابند بنایا جائے تاکہ شہر کی سڑکوں سمیت شہری حادثات سے محفوظ رہ سکیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button