ضلع جہلم میں آٹا وافر مقدار میں موجود ہے۔ ڈپٹی کمشنر کامران خان

0 6

جہلم: گراں فروشی اور ذخیرہ اندوزی کو روکنے اور ضلع جہلم میں پرائس کنٹرول کے موثر طریقہ کار کی نگرانی کے لیے نئی تشکیل پانے والی ضلعی پرائس کنٹرول کمیٹی کا اجلاس ڈپٹی کمشنر جہلم کامران خان اور ضلعی صدر مسلم لیگ ن چوہدری جاوید بوٹا کی زیرصدارت منعقد ہوا۔

ڈپٹی کمشنر جہلم کامران خان نے کہا کے اوورچارجنگ اور ناجائز منافع خوری پر ضلعی انتظامیہ کی زیروٹالرینس پالیسی ہے اور ضلع بھر میں پرائس کنٹرول میکانزم پر عملدرآمد کروا رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ حکومتی ہدایات پر سبسڈائزڈ ریٹ پر 10 کلو آٹا کا تھیلا 490 روپے میں فروخت کیا جا رہا ہے جس کے لیے ضلع بھر میں 237 سیلز پوائنٹس قائم کیے گئے ہیں، سیلز پوائنٹس کا قیام ایسی جگہوں پر عمل میں لایا گیا ہے جہاں عوام کی رسائی آسانی سے ممکن ہو سکے، روزانہ کی بنیاد پر 8993 آٹے کے بیگ سیلز پوائنٹس پر سپلائی کیے جا رہے ہیں اور ضلع جہلم میں آٹا وافر مقدار میں موجود ہے، آٹا کی دستیابی کے ساتھ ساتھ اس کے معیار کو بھی مانیٹر کیا جا رہا ہے۔

ڈپٹی کمشنر نے مزید کہا کہ حکومت پنجاب آٹا کے بعد گھی کے فی کلو پیکٹ پر بھی 30 روپے سبسڈی دینے جارہی ہے، جس کے لیے گراؤنڈ ورک مکمل ہو چکا ہے اور سیلز پوائنٹس قائم کر دیے گئے ہیں۔ ڈپٹی کمشنر نے تاجروں اور دکانداروں کو ہدایت کی کہ وہ اشیاء خوردونوش حکومتی مقرر کردہ نرخوں پر فروخت کریں اور قیمتوں کو نمایاں جگہ پر آویزاں کریں۔

اس موقع پر ضلعی صدر مسلم لیگ ن چوہدری بوٹا جاوید نے کہا ہے کہ حکومت کی اولین ترجیح عوام کو مہنگائی سے ریلیف فراہم کرنا ہے، جس کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائے جا رہے ہیں، اس مشکل کی گھڑی میں ہم سب کو مل کر آگے بڑھنا ہو گا، ہمارا مقصد دکانداروں کو تنگ کرنا یا پیچھے دھکیلنا نہیں ہے بلکہ حکومتی مقرر کردہ نرخوں پر اشیاء خوردونوش کی فروخت کو یقینی بنانا ہے، ناجائز منافع خوری سے عوام کا استحصال بھی نہیں ہونے دیں گے۔

اجلاس میں سابق ایم پی اے چوہدری ندیم خادم، سابق ایم پی اے مہر فیاض، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر جنرل مطاہر حیات وٹو، اسسٹنٹ کمشنرز، ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر، ڈسٹرکٹ آفیسر انڈسٹریز، تاجران سمیت دیگر ضلعی افسران نے شرکت کی۔

اپنی رائے دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.